فہمیدہ ریاض :ایک لمحے  کا سفر ہے  زندگی

غلام شبیررانا

مصطفی باد، پاکستان۔

فہمیدہ ریاض

 سلطانی ٔ جمہور، انسانی حقوق اور خواتین کے  حقوق کی علم بردار ترقی پسند ادیبہ فہمیدہ ریاض 21۔نومبر 2018 کی شب لاہور میں  خالق حقیقی سے  جا ملیں۔  وہ اپنی بیٹی سے  ملنے  کے  لیے  کراچی سے  لاہور پہنچی تھیں۔ بائیس نومبر 2018 کوان کی نماز جنازہ جامع مسجد عسکری، لاہور میں  ادا کی گئی اوربہار شاہ شہر خموشاں  کی خاک نے  ترجمہ نگاری،  تانیثیت، جرأتِ اظہار، انقلابی شاعری، ترقی پسند سوچ اور حریتِ فکر کے  ہمالہ کی ایک سر بہ فلک چوٹی کو ہمیشہ کے  لیے  اپنے  دامن میں  چھپالیا۔فہمیدہ ریاض نے  اپنے  اسلوب میں  پامال راہوں  اور عا م روش سے  ہٹ کر اپنے  جذبات و احساسات کے  اظہار کو شعار بنایا۔ ا یک زیرک، فعال،  جری اور حریتِ ضمیر سے  جینے  کی آرزومند ادیبہ کی حیثیت سے  فہمیدہ ریاض نے  ان موضوعات پر بھی کھل کر لکھا جو خواتین کے  لیے  بالعموم شجر ممنوعہ سمجھے  جاتے  ہیں۔  فہمیدہ ریاض نے  اٹھائیس جولائی1946کو میرٹھ ( اتر پردیش، بھارت)میں  ایک علمی و ادبی گھرانے  میں  جنم لیا۔ان کے  والد ریاض احمد کا تعلق شعبہ تعلیم سے  تھا اور ان کا شمار اپنے  عہد کے  ممتاز ماہرین تعلیم میں  ہوتاتھا۔چار سال کی عمر میں  والد کا سایہ سر سے  اُٹھ گیاتو والدہ حسنہ بیگم نے  ایک ذہن منتظم کی حیثیت سے  گھر کا انتظام سنبھالا اور اپنی ہو نہار بیٹی کی بہترین تربیت کی۔ فہمیدہ ریاض کو بچپن ہی سے  شاعری کا بہت شوق تھا جب وہ پندرہ برس کی تھی تواس کی پہلی نظم احمد ندیم قاسمی کی ادارت میں  شائع ہونے  والے  رجحان ساز ادبی مجلہ فنون میں  شائع ہوئی۔ فہمیدہ ریاض نے  ریڈیو پاکستان سے  نیوز کاسٹر کی حیثیت سے  عملی زندگی کا آغاز کیا۔ بائیس برس کی عمر میں  ان کا پہلا شعری مجموعہ منظر عام پر آیا۔ فہمیدہ ریاض نے  زمانہ طالب علمی میں  سیاسی اور سماجی سرگرمیوں  میں  حصہ لیا۔ اس کی پر جوش تقاریر پتھروں  سے  بھی اپنی تاثیر کا لوہا منو ا لیتی تھیں۔  پاکستان میں  صدر ایوب کے  دور حکومت(1958-1969) میں  نافذ ہونے  والے  یونی ورسٹی آرڈی ننس، پریس اینڈ پبلی کیشنز آرڈی ننس، فیملی لا آرڈی نننس اور ایبڈو کے  خلاف فہمیدہ ریاض نے  بائیں  بازو کی طلبا تنظیموں  سے  مل کر بھر پور احتجاج کیا۔سال 1984میں  ضیا الحق کے  دور میں  مارشل لا آرڈر کے  تحت طلبا کی یونینز پر پابندی پر بھی فہمیدہ ریاض نے  سخت تنقید کی۔  گریجویشن کرنے  کے  بعد فہمیدہ ریاض نے  اپنے  خاندان کی مرضی سے  شادی کر لی اور شوہر کے  ہمراہ بر طانیہ چلی گئیں۔ بر طانیہ میں  قیام کے  دوران میں  انھوں  نے  بر طانیہ کے  نشریاتی ادارے  بی بی سی اردو سروس میں  ملازمت کی۔اس کے  ساتھ ہی اپنی تعلیم بھی جاری رکھی اور فلم کی تیاری کے  کورس میں  ڈگری حاصل کی۔ اس شادی میں  ان کی ایک بچی پیدا ہوئی اور اس کے  سا تھ ہی شوہر نے  طلاق دے  دی۔اپنے  پہلے  شوہر سے  طلاق ملنے  کے  بعد فہمیدہ ریاض واپس پاکستان چلی آ ئیں  اور کراچی میں  ایک ایڈورٹائزنگ کمپنی میں  ملاز م ہو گئیں۔ جلد ہی انھوں  نے  اپنے  ذاتی ادبی مجلہ ’’ آواز ‘‘ کی اشاعت کا آغاز کر دیا۔ کراچی میں  ان کی ملاقات بائیں  بازو سے  تعلق رکھنے  والے  فعال اور مستعد سیاسی کارکن اور سندھی قوم پرست ظفر علی اجن سے  ہوئی۔باہمی رضا مندی سے  دونوں  نے  شادی کر لی۔  ظفر علی اجن کی کتاب ’’Bhutto Speaks from the Grave‘‘کا پہلا ایڈیش سال 1983میں  شائع ہوا جب کہ اس کتاب کا دوسرا ایڈیشن سال 2007میں  شائع ہوا۔

 فہمیدہ ریاض کی اس دوسری شادی سے  ایک بیٹی ویرتا علی اجن اور ایک بیٹا کبیر علی اجن پیدا ہوئے۔  ویرتا علی اجن بڑی ہے  جب کہ کبیر علی اجن چھوٹا ہے۔  حریت فکر کے  علم بردار ادیبوں  کے  مجلہ ’’ آواز ‘‘ میں  شائع ہونے  والے  مضامین کومقتدر حلقو ں  نے  نا پسند کیا۔ مجلہ ’’ آواز ‘‘ کی مجلس ادارت زیر عتا ب آ گئی حکومتی احکامات کے  تحت مجلہ کی اشاعت کا سلسلہ بند کر دیا گیا اور صدر ضیا الحق کی حکومت نے  فہمیدہ ریاض او ران کے  شوہر کی گرفتاری کے  احکامات صادر ہو گئے۔گرفتار ی سے  پہلے  فہمیدہ ریاض نے  ضمانت کرا لی مگر ان کے  شوہر کو جیل بھیج دیا گیا۔فہمیدہ ریاض ایک عالمی مشاعرے  میں  شرکت کی غرض سے  اپنے  دو نوں  بچوں  ویرتا علی اجن اور کبیر علی اجن اور اپنی بہن کے  ہمراہ بھارت گئیں  اور وہیں  خود ساختہ جلاوطنی اختیار کر لی۔  جیل سے  رہائی ملنے  کے  بعد فہمیدہ ریاض کے شوہر بھی اپنے  اہلِ خانہ کے  پاس بھار ت چلے گئے۔ خود ساختہ جلاوطنی کے  عرصے  میں  ا س خاندان کو بھارتی حکومت کی طرف سے  سہولتیں  فراہم کی گئیں۔  بھارت میں  مقیم فہمیدہ ریاض کے  رشتہ داروں  نے  مقدور بھر اس خاندان مدد کی۔  فہمیدہ ریاض کے  خاندان نے  سات برس(مارچ 1981تادسمبر 1987) بھارت میں  قیام کیا۔ جلا وطنی کے  عرصے  میں  فہمیدہ ریاض نے  سال 1920میں  روشنی کا سفر شروع کرنے  والی بھارت کی پبلک سیکٹر کی جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی میں  تدریسی خدمات انجام دیں۔

 سال 1988میں  جب پاکستان میں  سلطانی ٔ جمہور کا دور آیا تو فہمیدہ ریاض بھی اپنے  خاندان کے  ساتھ پاکستان چلی آ ئی۔بے  نظیر بھٹو کے  پہلے  دور حکومت (1988-1990)میں  فہمیدہ ریاض نیشنل بک کونسل (موجودہ نیشنل بک فاؤنڈیشن)کے  منیجنگ ڈائریکٹر کے  منصب پر فائز رہیں۔ بے  نظر بھٹو کے  دوسرے  دورِ حکومت (1993-1996)میں  فہمیدہ ریاض وزارت ِ ثقافت سے  وابستہ رہیں۔ فہمیدہ ریاض نے  گیارہ برس (2000-2011)اردو ڈکشنری بورڈ کے  چیف ایڈیٹر کی حیثیت سے  خدمات انجام دیں۔  قیام پاکستان کے  بعدپاکستانی خواتین میں  عصر ی آ گہی کی نمو، خواتین کے  حقوق،  اور قومی مسائل کے  بارے  میں  مثبت شعور و آگہی کو مہمیز کرنے  میں  جن خواتین نے  فعا ل کردار ادا کیا ان میں  الطاف فاطمہ،  بانو قدسیہ،  پروین شاکر،  ثمینہ راجا، خدیجہ مستور، ذکیہ بدر، فاطمہ ثریا بجیا،  فضل بانو، ممتاز شیریں ، رضیہ بٹ،  سارا شگفتہ،  عصمت چغتائی، فہمیدہ ریاض،  نجمہ صدیق اورہاجرہ مسرور کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں۔

 ظفر علی اجن اور فہمیدہ ریاض نے  اپنے  بچوں  کی تعلیم و تربیت میں  کوئی کسر اُٹھا نہ رکھی۔ بڑی بیٹی ڈاکٹر ویرتا علی اجن شعبہ طب سے  وابستہ ہیں۔ ان کی شاد ی ہو چکی ہے  اور ایک بیٹے  کی ماں  ہیں۔  فہمیدہ ریاض کا بیٹا کبیر علی اجن اعلیٰ تعلیم کے  لیے  سال 2000میں  امریکہ چلا گیا۔  کبیر علی اجن نے  تعلیم کے  سلسلے  میں  سات سال امریکہ میں  گزارے  مگر اس عرصے  میں  اس کی تعلیمی مصروفیات اس قدر زیادہ رہیں  کہ شدید خواہش کے  باوجودکبھی وطن نہ آ سکا۔اس عرصے  میں  اس کی والدہ فہمیدہ ریاض تو اپنے  بیٹے  سے  ملنے  کے  لیے  امریکہ جاتی رہی مگر والد ظفر علی اجن امریکہ نہ جا سکا۔ کبیر علی اجن نے  سال 2007میں  ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی اور مناسب ملازمت کی تلا ش شرع کر دی۔ اِدھر پاکستان میں  فہمیدہ ریاض اور ظفر علی اجن نے  اپنے  اُنتیس سالہ اکلوتے  نوجوان بیٹے  کبیر علی اجن کی شادی کے  لیے  مناسب رشتے  کی تلاش شروع کر دی۔اُدھر تقدیر جو ہر مرحلہ اور ہر گام پر انسانی تدابیر کی دھجیاں  اُڑا دیتی ہے  یہ سب کچھ دیکھ رہی تھی۔ اکتوبر 2007کی ایک منحوس شام اس خاندان کے  لیے  شام ِ الم ثابت ہوئی جب ان کا بیٹاکبیر علی اجن اپنے  چند معتمد ساتھیوں  کے  ہمراہ ایک پکنک پارٹی میں  شامل ہوا۔ یہ پکنک پارٹی ایک وسیع باغ میں  ہوئی جہاں  تیراکی کے  لیے  صاف پانی کا ایک گہرا تالاب بھی موجود تھا۔اس تالاب میں  تیراکی کا مظاہرہ کرنے  والوں  کے  لیے  تمام حفاظتی انتظامات موجود تھے۔ کبیر علی اجن اپنے  ساتھیوں  سمیت مسکراتا ہوا تیراکی کے  تالاب میں  اُترا۔وہ ایک مشاق تیرا ک تھا اس نے  گہرے  پانی میں  غوطہ لگایا مگر خلاف معمول جب وہ سطح آب پر نہ اُبھرا تو اس کے  وفادار ساتھیوں  کا دِل بیٹھ گیا اور سب کے  ہاتھ پاؤں  پھو ل گئے۔دیکھتے  ہی دیکھتے  نوجوا ن کبیر علی اُجن جہاں  سے  اُٹھ گیااور دوستوں  کی حسرت بھری نگاہیں  دیکھتی کی دیکھتی رہ گئیں۔  درد کی اس مسموم ہوا نے  فہمیدہ ریاض کی اُمیدوں  کے  چمن کو ویرا ن کر دیا۔  ضعیف والدین کی آنکھوں  سے  جوئے  خون روا ں  تھی اور دِل اشک بار تھا۔ نیم جاں  ضعیف ماں  اپنے  نو جوان بیٹے  کی میت پاکستان لانے  کے  لیے  امریکہ روانہ ہو گئی۔ اس جان لیواصدمے  نے  ظفر علی اجن اور فہمیدہ ریاض کی روح کو زخم زخم کر دیا۔  پیہم سات سال تک اپنے  بیٹے  کی صورت دیکھنے  کو ترسنے  والے  باپ نے  جب اپنے  بیتے  کی دائمی مفارقت کی خبر سنی تو وہ زندہ در گور ہو گیا۔  تقدیر کا یہ زخم سہنے  کے  بعد فہمیدہ ریاض کی زندگی کا سفر تو افتاں  و خیزاں  کٹ گیامگر اس کا پورا وجود کرچیوں  میں  بٹ گیا۔تقدیر کے  لگائے  ہوئے  صدمات کے  ایسے  گہرے  گھاؤ سہنے  کے  بعد کارِ جہاں  کے  ہیچ ہونے  اور فرصتِ زندگی کے  انتہائی کم ہونے  کے  بارے  میں  کوئی ابہام نہیں  رہتا۔ مرزا اسداﷲ خان غالب نے  عارف کی الم ناک موت کے  صدمے  سے  نڈھال ہو کر جن الفاظ میں  اپنے  جذبات حزیں  کا اظہار کرتے  ہوئے  کہا تھا کبیرعلی اجن کی وفات پروہی کیفیت فہمیدہ ریاض کی تھی:

 لازم تھا کہ دیکھو مِرا رستاکوئی دِن اور

 تنہا گئے  کیوں  اب رہو تنہا کوئی دِن اور

 تم ماہِ شب چار دہم تھے  میرے  گھر کے

 پِھر کیوں  نہ رہا گھر کا وہ نقشہ کوئی دن اور

 ناداں  ہو جو کہتے  ہو کیو ں  جیتے  ہو غالب ؔ

 قسمت میں  ہے  مرنے  کی تمنا کوئی دِن اور

 دردِ دِل صرف درد آ شنا ہی سمجھ سکتاہے  میں  فہمیدہ ریاض اور ظفر علی اجن کے  درد کوسمجھتا ہوں۔  اجل کے  بے  رحم ہاتھوں  نے  چھے  جولائی 2017کو میرا نو جوان بیٹا سجاد حسین مجھ سے  چھین لیا۔ میرا خیال ہے  کہ موت یاس و ہراس کے  سو اکچھ نہیں  جو محض ایک آغاز کے  انجام کا اعلان ہے  کہ اب حشر تک کا دائمی سکوت ہی ہمارے  خالق کا فرمان ہے۔  عزیزہستیوں  کی رحلت سے  ان کے  اجسام آنکھوں  سے  اوجھل ہو جاتے  ہیں  اور یہ عنبرفشاں  پھول شہر ِخموشاں  میں  تہہ خاک نہاں  ہو جاتے  ہیں۔  ان کی روح عالم بالا میں  پہنچ جا تی ہے  اس کے  بعد فضاؤ ں  میں  ہر سُو ان کی یادیں  بکھر جاتی ہیں  اور قلوب میں  اُن کی محبت مستقل طور پر قیام پذیر ہو جاتی ہے۔ ذہن و ذکاوت میں  ان کی سوچیں  ڈیرہ ڈال دیتی ہیں۔  الم نصیب پس ماندگان کے  لیے  موت کے  جان لیوا صدمات برداشت کرنا بہت کٹھن اور صبر آزما مرحلہ ہے۔  ایسا محسوس ہوتاہے  کہ فرشتہ ٔ اجل نے  ہمارے  جسم کا ایک حصہ کاٹ کر الگ کر دیا ہے  اور ہم اس کے  بغیرسانس گِن گِن کر زندگی کے  دِن پُورے  کرنے  پر مجبور ہیں۔  اپنے  رفتگان کا الوداعی دیدار کرتے  وقت ہماری چیخ پکار اور آہ و فغاں  اُن کے  لیے  نہیں  بل کہ اپنی حسرت ناک بے  بسی،  اذیت ناک محرومی اور عبر ت ناک احساس ِزیاں  کے  باعث ہوتی ہے۔ غم بھی ایک متلاطم بحرِ زخار کے  مانند ہے  جس کے  مدو جزر میں  الم نصیب انسانوں  کی کشتی ٔجاں  سدا ہچکولے  کھاتی رہتی ہے۔  غم و آلا م کے  اس مہیب طوفان کی منھ زور لہریں  سوگوار پس ماندگان کی راحت ومسرت کو خس و خاشاک کے  مانند بہا لے  جاتی ہیں۔  روح، ذہن اورقلب کی اتھاہ گہرائیوں  میں  سما جانے  والے  غم کا یہ جوار بھاٹا حد درجہ لرزہ خیز اور اعصاب شکن ثابت ہوتا ہے۔ کبھی غم کے  اس طوفان کی لہروں  میں  سکوت ہوتا ہے  تو کبھی مصائب و آلام کی یہ بلاخیز موجیں  جب حد سے  گزر جاتی ہیں  تو صبر و تحمل اور ہوش و خرد کو غرقاب کر دیتی ہیں۔  یاس و ہراس، ابتلا وآزمائش اور روحانی کرب و ذہنی اذیت کے  اِن تباہ کن شب و روزمیں  دِ ل گرفتہ پس ماندگان کے  پاس اِس کے  سوا کوئی چارہ ٔ کار نہیں  کہ وہ باقی عمرمصائب و آلام کی آگ سے  دہکتے  اس متلاطم سمندر کو تیر کر عبور کرنے  اور موہوم کنارہ ٔ عافیت پر پہنچنے  کے  لیے  ہاتھ پاؤ ں  مارتے  رہیں۔  ہمارے  عزیز رفتگاں  ہماری بے  قراری،  بے  چینی اور اضطراب کو دیکھ کر عالم خواب میں  ہماری ڈھارس بندھا تے  ہیں  کہ اب دوبارہ ملاقات یقیناًہو گی مگر حشر تلک انتظار کرنا ہوگا۔سینۂ وقت سے  پُھوٹنے  والی موجِ حوادث نرم و نازک، کومل اورعطر بیز غنچوں  کو اس طرح سفاکی سے  پیوندِ خاک کر دیتی ہے  جس طرح گرد آلود آندھی کے  تند و تیز بگولے  پھول پر بیٹھی سہمی ہوئی نحیف و ناتواں  تتلی کو زمین پر پٹخ دیتے  ہیں۔ پیہم حادثات کے  بعد فضا میں  شب و روز ایسے  نوحے  سنائی دیتے  ہیں  جو سننے  والوں  کے  قلبِ حزیں  کو مکمل انہدام کے  قریب پہنچا دیتے  ہیں۔ کہکشاں  پر چاند ستاروں  کے  ایاغ دیکھ کردائمی مفارقت دینے  والوں  کی یاد سُلگ اُٹھتی ہے۔ تقدیر کے  ہاتھوں  آرزووں  کے  شگفتہ سمن زار جب وقفِ خزاں  ہو جاتے  ہیں  تو رنگ،  خوشبو، رُوپ،  چھب اور حُسن و خُوبی سے  وابستہ تمام حقائق پلک جھپکتے  میں  خیال و خواب بن جاتے  ہیں۔  روح کے  قرطاس پر دائمی مفارقت دینے  والوں  کی یادوں  کے  انمٹ نقوش اور گہرے  ہونے  لگتے  ہیں۔ ان حالات میں  قصرِ دِل کے  شکستہ دروازے  پر لگا صبر و رضا کا قفل بھی کُھل جاتاہے۔ سیلابِ گریہ کی تباہ کاریوں، من کے  روگ، جذبات ِ حزیں  کے  سوگ اور خانہ بربادیوں  کی کیفیات روزنِ اِدراک سے  اس طرح سامنے  آتی ہیں  کہ دِ ل دہل جاتا ہے۔

 فہمیدہ ریاض کا شمار پاکستان میں  تانیثیت کی بنیاد گزار خواتین میں  ہوتاہے۔فہمیدہ ریا ض سے  مل کر زندگی سے  پیار ہو جاتا تھا۔زندگی بھر خواتین کے  حقوق کے  لیے  جد و جہد کرنے  والی اس پر عزم ادیبہ نے  تانیثیت کے  بارے  میں  جو واضح موقف اختیار کیا وہ تاریخ کا ایک معتبر حوالہ ہے۔ یہاں  تانیثیت کا تاریخی تناظر میں  مطالعہ مناسب رہے  گا۔ فہمیدہ ریاض کا خیا ل تھا کہ عالمی ادبیات کا مطالعہ کرنے  سے  یہ بات روز روشن کی طرح عیاں  ہوجاتی ہے  کہ ہر عہد میں  مفکرین نے  وجود زن کی اہمیت کو تسلیم کیا ہے۔ تاریخ کے  ہر دور میں  رنگ،  خوشبواور حسن وخوبی کے  تمام استعارے  وجودِ زن سے  منسوب چلے  آرہے  ہیں۔  اس اعتبار سے  دیکھا جائے  توعصر حاضر میں  تانیثیت کو ایک عالمی تصور کی حیثیت حاصل ہوگئی ہے۔  علامہ اقبال نے  خواتین کے  کردار کے  حوالے  سے  لکھا ہے  ؂

 وجو د زن سے  ہے  تصوہر کائنات میں  رنگ

  اسی کے  ساز سے  ہے  زندگی کا سوز دروں

 شرف میں  بڑھ کے  ثریا سے  مشتِ خاک اِس کی

  کہ ہر شرف ہے  ا ِسی درج کا در مکنوں

 مکالمات فلاطوں  نہ لکھ سکی لیکن

اِسی کے  شعلے  سے  ٹوٹا شرار افلاطوں  (1)

دنیا بھر کی خواتین کے  لب ولہجے  میں  تخلیقِ ادب کی روایت خاصی قدیم ہے۔ ہر زبان کے  اَدب میں  اس کی مثالیں  موجود ہیں۔  فہمیدہ ریاض نے  اس حقیقت کو واضح کیا کہ نوخیز بچے  کی پہلی تربیت اور اخلاقیات کا گہوارہ آغوش مادر ہی ہوتی ہے۔  اچھی مائیں  قوم کو معیار اور وقارکی رفعت میں  ہمدوش ثریا کر دیتی ہیں۔  انہی کے  دم سے  امیدوں  کی فصل ہمیشہ شاداب رہتی ہے۔یہ دانہ دانہ جمع کرکے  خرمن بنانے  پر قادر ہیں  تاکہ آنے  والی نسلیں  فروغِ گلشن اور صوت ہزار کا موسم دیکھ سکیں۔  خلوص و دردمندی، ایثار و وفا، صبر و رضا،  قناعت اور استغنا خواتین کا امتیازی وصف ہے۔ تانیثیت کی علم بردار اپنے  عہد کی مقبول امریکی شاعرہ لوئیس بوگان(Louise Bogan:1897-1970)نے  کہا تھا:

Women have no wilderness in them

They are provident insted

Content in the tight hot cell of their hearts

To eat dusty bread (2)

فہمیدہ ریاض نے  مدلل انداز میں  قارئین کو اس جانب متوجہ کیا کہ فنون لطیفہ اور ادب کا کوئی شعبہ ایسا نہیں  جہاں  با صلاحیت خواتین نے  اپنی فقید المثال کامرانیوں  کے  جھنڈے  نہ گاڑے  ہوں۔  آ ج تو زندگی کے  ہر شعبے  میں  خواتین نے  اپنی بے  پناہ استعداد کار سے  اقوام عالم کو حیرت زدہ کر دیا ہے۔  یہ حقیقت روز روشن کی طرح واضح ہے  کہ خواتین نے  فنون لطیفہ اور معاشرے  میں  ارتباط کے  حوالے  سے  ایک مضبوط پُل کا کردار ادا کیا۔  فہمیدہ ریاض کو اس بات کا قلق تھا کہ آج کے  مادی دور میں  فرد کی بے  چہرگی اور عدم شناخت نے  گمبھیر صورت اختیار کرلی ہے۔  ان لرزہ خیز، اعصاب شکن او رصبر آزماحالات میں  بھی انھوں  نے  خواتین کو اس جانب متوجہ کیا کہ ہر فرد کو اپنی حقیقت سے  آشنا ہونا چاہیے۔  فہمیدہ ریاض اس بات پر دل گرفتہ تھیں  کہ مسلسل شکست دل کے  باعث مظلوم طبقہ بالخصوص پس ماندہ طبقے  سے  تعلق رکھنے  والی خواتین کو محرومیوں  کی بھینٹ چڑھا دیا گیا ہے۔  ظالم و سفاک،  موذی ومکار استحصالی عناصرنے  اپنے  مکر کی چالوں  سے  اُداس نسلیں  در بہ در، بے  خانماں  عورتیں  خاک بہ سر،  رُتیں  بے  ثمر، کلیاں  شرر،  زندگیاں  پرخطر،  آہیں  بے  اثر ہو اور گلیاں  خوں  میں  تر کر دی ہیں۔  فہمیدہ ریاض نے  اپنے  طرز ِ عمل سے  ا س امرکی صراحت کر دی کہ خواتین نے  ہر عہد میں  جبر کی مزاحمت کیا، استبداد کے  سامنے  سپر انداز ہونے  سے  انکار کیا، ہر ظالم پہ لعنت بھیجنا اپنا شعار بنایااور انتہائی نا مساعد حالات میں  بھی حریتِ ضمیر سے  جینے  کا راستہ اختیار کیا۔ اس حقیقت سے  انکار ممکن نہیں  تیسری دنیا کے  ترقی پذیر ممالک کا معاشرہ بالعموم مردوں  کی بالادستی کے  تصور کو تسلیم کر چکا ہے۔ اس قسم کے  ماحول میں  جب کہ خواتین کو اپنے  وجود کے  اثبات اور مسابقت کے  لیے  انتھک جدو جہد کرنا پڑے ، خواتین کے  لیے  ترقی کے  یکساں  مواقع تخیل کی شادبی کے  سوا کچھ نہیں۔ یہ امر باعث اطمینان ہے  کہ فہمیدہ ریاض جیسی جری، پر عزم اور اہل وطن سے  والہانہ محبت کرنے  والی خواتین کی فکری کاوشیں  سفاک ظلمتوں  میں  ستارۂ سحر کے  مانند ہیں۔ انھوں  نے  کٹھن حالات میں  بھی حوصلے  اور امید کا دامن تھا م کر سوئے  منزل رواں  دواں  رہنے  کا جو عہد وفا استوار کیا اسی کو علاج گرش لیل و نہار بھی قرار دیا۔آج ہم دیکھتے  ہیں  کہ ہر شعبہ ٔ زندگی میں  خواتین بھرپور اور اہم کردار ادا کر رہی ہیں۔ عالمی ادبیات کا مطالعہ کرنے  سے  یہ حقیقت کھل کر سامنے  آتی ہے  کہ سماجی زندگی کے  جملہ موضوعات پر ادب سے  تعلق رکھنے  والی خواتین نے  اشہبِ قلم کی جو بے  مثال جو لا نیاں  دکھائی ہیں  ان کے  اعجاز سے  طلوع صبح بہاراں  کے  امکانات روشن تر ہوتے  چلے  جا رہے  ہیں۔

 تانیثیت کو فہمیدہ ریاض نے  ایک ایسی مثبت سوچ، مدبرانہ تجزیہ اور دانش ورانہ اسلوب سے  تعبیر کیا جس کے  اہداف میں  خواتین کے  لیے  معاشرے  میں  ترقی کے  منصفانہ اور یکساں  مواقع کی فراہمی کو یقینی بنانے  کا واضح لائحہ عمل متعین کیا گیا ہو۔ایسے  حالات پیدا کیے  جائیں  کہ خواتین کسی خوف و ہراس کے  بغیر کاروانِ ہستی کے  تیزگام قافلے  میں  مردوں  کے  شانہ بہ شانہ اپنا سفر جاری رکھ سکیں۔ روشنی کے  اس سفر میں  انھیں  استحصالی عناصر کے  مکر کی چالوں  سے  خبردار کرنا تانیثیت کا اہم موضوع رہا ہے۔ ایک فلاحی معاشرے  میں  اس با ت کا خیال رکھا جا تا ہے  کہ معاشرے  کے  تما م افراد کو ہر قسم کا معاشرتی تحفظ فراہم کیا جائے  کیونکہ ہر فرد کو ملت کے  مقدر کے  ستارے  کی حیثیت حاصل ہوتی ہے۔ تانیثیت نے  حق و انصاف کی بالا دستی، حریتِ فکر، آزادی ٔ اظہار اور معاشرے  کو ہر قسم کے  استحصال سے  پاک کرنے  پر اصرار کیا۔  فہمیدہ ریاض کو اس بات پر گہری تشویش تھی کہ فکری کجی کے  باعث بعض اوقات تانیثیت اور جنسیت کو خلط ملط کر دیا جاتا ہے  حالانکہ تانیثیت اورجنسیت میں  ایک واضح حد فاصل ہے  بل کہ یہ کہنا درست ہو گا کہ تانیثیت اپنے  مقاصد کے  اعتبار سے  جنسیت کی ضد ہے۔ تانیثیت کے  امتیازی پہلو یہ ہیں  کہ اس میں  زندگی کی سماجی، ثقافتی، معاشرتی، سیاسی، عمرانی اور ہر قسم کی تخلیقی اقدار و روایات کو صیقل کرنے  اور انھیں  مثبت انداز میں  بروئے  کار لانے  کی راہ دکھائی جاتی ہے۔ اس میں  خواتین کی صلاحیتوں  کو نکھارنے  کے  فراواں  مواقع کی جستجو پر توجہ مرکوز رہتی ہے۔

 عالمی ادب اور تانیثیت کو تاریخی تناظر میں  دیکھنے  سے  یہ معلوم ہوتاہے  کہ یورپ میں  تانیثت کا غلغلہ پندرہویں  صدی عیسوی میں  اٹھااوراس میں  مد و جزر کی کیفیت سامنے  آتی رہی۔  جمود کے  ماحول میں  یہ ٹھہرے  پانی میں  ایک پتھر کے  مانند تھی۔ اس کی دوسری لہر 1960میں  اٹھی جب کہ تیسری لہر کے  گرداب 1980میں  دیکھے  گئے۔ان تما م حالات اور لہروں  کا یہ موہوم مد و جزر اور جوار بھاٹا اپنے  پیچھے جو کچھ چھوڑ گیا اس کا لب لبا ب یہ ہے  کہ خواتین کو اپنی زندگی کے  تمام شعبوں  میں  حریت ضمیر سے  جینے  کی آزادی ملنی چاہیے۔ تاریخی تناظر میں  دیکھا جائے  اور ہر قسم کی عصبیت سے  گلو خلاصی حاصل کر لی جائے  تویہ بات ایک مسلمہ صداقت کے  طور پر سامنے  آتی ہے  کہ آج سے  چودہ سو سال پہلے  اسلام نے  خواتین کوجس عزت، تکریم اور بلند مقام سے  نوازا اس سے  پہلے  ایسی کوئی مثال نہیں  ملتی۔تبلیغ اسلام کے  ابتدائی دور سے  لے  کر خلافت راشدہ کے  زمانے  تک اسلامی معاشرے  میں  خواتین کے  مقام اور کردار کا حقیقی انداز میں  تعین کیا جا چکا تھا۔اس عہد میں  مسلم خواتین ہر شعبہ زندگی میں  فعال کردار ادا کر رہی تھیں۔ اسلام نے  زندگی کے  تمام شعبوں  میں  خواتین کو یکساں  مواقع اور منصفانہ ماحول میں  زندگی بسر کرنے  کی ضمانت دی۔ آج بھی اگر وہی جذبہ بیدار ہو جائے  تو آگ بھی انداز گلستاں  پیدا کر سکتی ہے۔

 فہمیدہ ریاض اس بات سے  مطمئن تھیں  کہ نو آبادیاتی دور کے  خاتمے  کے  بعد پاکستان میں  تانیثیت کے  حوالے  سے  تنقیدی مباحث روز افزوں  ہیں۔  قیام پاکستان کے  بعد پاکستانی خواتین تیشہ ٔ حرف سے  فصیلِ جبر کو منہدم کرنے  کی مقدور بھر سعی کر تی نظر آتی ہیں۔ ایسے  تمام تار عنکبوت جو کہ خواتین کی خوش حالی اور ترقی کے  اُفق کو گہنا رہے  ہیں  انھیں  نیست و نابود کرنے  کا عزم لیے  پاکستانی خواتین اپنے  ضمیر کی للکار سے  جبر کے  ایوانوں  پر لرزہ طاری کردینے  کی صلاحیت سے  متمتع ہیں۔ ان کا نصب العین یہ ہے  کہ انسانیت کی توہین، تذلیل، تضحیک اور بے  توقیری کرنے  والے  اجلاف و ارزال اور سفہا کے  کریہہ چہرے  سے  نقاب اٹھانے  میں  کبھی تامل نہ کیاجائے  اور ایسے  ننگ انسانیت درندوں  کے  قبیح کردارسے  اہلِ درد کو آگاہ کیا جائے۔  یہ صور تِ حال فہمیدہ ریاض کے  لیے  حوصلے  اور امید کی نقیب تھی کہ تانیثیت نے  تمام خفاش منش عناصر کو آئینہ دکھا یا ہے  اور زندگی کی حقیقی معنویت کو اجاگر کیا ہے۔ تانیثیت کا دائرہ کار تاریخ، علم بشریات،  عمرانیات، معاشیات، ادب، فلسفہ، جغرافیہ اور نفسیات جیسے  اہم شعبوں  تک پھیلا ہوا ہے۔ تانیثیت میں  تحلیل نفسی کو کلیدی اہمیت کا حامل سمجھا جاتا ہے۔ تانیثیت کے  مطابق معاشرے  میں  مرد اور عورت کو برابری کی سطح پر مسائل زیست کا حل تلاش کرنا چاہیے  اوریہ اپنے  وجود کا خود اثبات کرتی ہے۔  فہمیدہ ریاض اپنے  موقف کی وضاحت کرتے  ہوئے  اس بات پر زور دیتی تھیں  کہ تانیثیت نے  معاشرے  میں  بڑھتے  ہوئے  تشدد، استحصال،  جنسی جنون اور ہیجان کی مسموم فضا کا قلع قمع کرنے  اور اخلاقی بے  راہ روی کو بیخ و بن سے  اُکھاڑ پھینکنے  کے  سلسلے  میں  جو کردار ادا کیا و ہ ہر اعتبار سے  لائق تحسین ہے۔ زندگی کی اقدارِ عالیہ کے  تحفط اور درخشاں  روایات کے  قصرِ عالی شا ن کی بقا کی خاطر تانیثیت نے  ایک قابل عمل معیار وضع کیا جو کہ خواتین کو حوصلے  ا ور اعتماد سے  آگے  بڑھنے  کا ولولہ عطا کرتا ہے۔ اخلاقی اوصاف کے  بیان میں  بھی تانیثیت نے  گہری دلچسپی لی۔  قدر ت کا ملہ نے  ا ن اوصاف حمیدہ سے  خواتین کو نہایت فیاضی سے  متمتع کیا ہے۔ اس کے  ساتھ ساتھ قدرتی عنایات کا دل نشیں  انداز میں  بیان بھی اس کا امتیازی وصف ہے۔ان فنی تجربات کے  ذریعے  جدید اور متنوع موضوعات سامنے  آئے  اورنئے  امکانات تک رسائی کو یقینی بنانے  کی مساعی کا سلسلہ چل نکلا۔

 فہمیدہ ریاض کے  اسلوب کا مطالعہ کرنے  سے  اس بات پر پختہ یقین ہو جاتا ہے  کہ قدر ت کے  اس وسیع نظام میں  جمود اور سکون بہت محال ہے۔ زندگی حرکت اور حرارت سے  عبارت ہے۔ کسی بھی عہد میں  یکسانیت کو پسند نہیں  کیا گیا اس کا سبب یہ ہے  کہ یکسانیت سے  ایک مشینی سی صورت حال کا گمان گزرتا ہے۔اس عالم آب و گل میں  سلسلہ ٔ روز وشب ہی کچھ ایسا ہے  کہ مرد اور عورت کی مساو ی حیثیت کے  بارے  میں  بالعموم تحفظات کا اظہار کیا جاتا رہا ہے۔ تانیثیت نے  اس اہم موضوع پر توجہ مرکوز کرکے  بلا شبہ اہم خدمت انجام دی۔  فہمیدہ ریاض نے  تانیثیت پر مبنی نظریے (Feminist Theory)میں  خواتین کو مژدۂ جاں  فزا سنایا کہ قید حیات اور بند غم سے  دل برداشتہ ہونے  کی ضرورت نہیں۔ زندگی تو جوئے  شیر، تیشہ اور سنگ گراں  کا نام ہے۔ عزت اور وقار کے  ساتھ زندہ رہنا، زندگی کی حیات آفریں  اقدار کو پروان چڑھانا، خوب سے  خوب تر کی جستجو کرنا، ارتقا کی جانب گامزن رہنا، کامرانی اور مسرت کی جستجو کرنا، اپنی صلاحیتوں  کا لوہا منوانا، حریت فکر اور آزادیٔ اظہار کی خاطر کسی قربانی سے  دریغ نہ کرنا،  تخلیقی فن کار کی انا اورخودداری کا بھرم بر قرار رکھنااور اپنے  تخلیقی وجود کا اثبات کرنا خواتین کا اہم ترین منصب ہے۔ تانیثیت نے  افراد، معاشرے ، علوم اور جنس کے  حوالے  سے  ایک موزوں  ارتباط کی جانب توجہ مبذول کرائی۔ممتاز نقاد ٹیری ایگلٹن (Terry Eagleton)نے  لکھا ہے  :

      “Feminist theory provided that precious link between academia and society as well as between problems of identity and those of political organization ,which was in general harder and harder to come by in an increasingly conservative age.”(3)

 تانیثیت کو ادبی حلقوں  میں  ایک نوعیت کی تنقید سے  تعبیر کیا جا تا ہے۔ اس کا مقصد یہ ہے  کہ خواتین جنھیں  معاشرے  میں  ایک اہم مقام حاصل ہے  ان کی خوابیدہ صلاحیتوں  کو نکھارا جائے۔ اد ب اور فنونِ لطیفہ کے  شعبوں  میں  انھیں  تخلیقی اظہار کے  فراواں  مواقع فراہم کیے  جائیں۔  یہ حقیقت کسی سے  مخفی نہیں  کہ مغرب میں  تانیثیت کو سال 1970میں  پزیرائی ملی۔  وقت گزرنے  کے  ساتھ ساتھ یورپی دانش وروں  نے  اس کی ترویج و اشاعت میں  گہری دلچسپی لی۔ اس طرح رفتہ رفتہ لسانیات اور ادبیات میں  تانیثیت کو ایک غالب اور عصری آگہی کے  مظہر نظریے  کے  طور پر علمی اور ادبی حلقوں  نے  بہت سراہا۔ سال1980کے  بعد سے  تانیثیت پر مبنی تصورات کو وسیع تر تناظر میں  دیکھتے  ہوئے  اس کی سماجی اہمیت پر زور دیا گیا۔اس طرح ایک ایسا سماجی ڈھانچہ قائم کرنے  کی صورت تلاش کی گئی جس میں  خواتین کے  لیے  سازگار فضا میں  کام کرنے  کے  بہترین مواقع ادستیاب ہوں۔  پاکستان میں  فہمیدہ ریاض اور ان کی ہم خیال خواتین نے  تانیثیت کے  فروغ کے  لیے  بے  مثال جد و جہد کی اورخواتین کو ادب کے  وسیلے  سے  زندگی کی رعنائیوں  اور توانائیوں  میں  اضافہ کرنے  کی راہ دکھائی۔ان کا نصب العین یہ تھا کہ جذبات، تخیلات اور احساسات کو اس طرح الفاظ کے  قالب میں  ڈھالا جائے  کہ اظہار کی پاکیزگی اور اسلوب کی ندرت کے  معجز نما اثر سے  خواتین کو قوت ارادی سے  مالا مال کر دیا جائے  اور اس طرح انسانیت کے  وقار اور سر بلندی کے  اہداف تک رسائی کی صورت پیدا ہو سکے۔ اس عرصے  میں  تانیثیت کی باز گشت پوری د نیا میں  سنائی دینے  لگی۔ خاص طور پر فرانس، برطانیہ، شمالی امریکہ، ریاست ہائے  متحدہ امریکہ اور کینیڈا میں  اس پر قابل قدر کام ہوا۔یہ بات قابل ذکر ہے  کہ تانیثیت کی شکل میں  بولنے  اور سننے  والوں  کے  مشترکہ مفادات پر مبنی ایک ایسا ڈسکورس منصۂ شہود پر آیاجس میں  خواتین کے  منفرد اسلوب کا اعتراف کیا گیا۔

 اکثر کہا جاتا ہے  کہ نسائی جذبات میں  انانیت نمایاں  رہتی ہے  مگر یہ حقیقت فراموش نہیں  کرنی چاہیے  کہ ان کے  جذبات میں  خلوص،  ایثار، مروّت، محبت اور شگفتگی کا عنصر ہمیشہ غالب رہتا ہے۔ تانیثیت نے  انسانی وجود کی ایسی عطر بیزی اور عنبر فشانی کا سراغ لگایاجو کہ عطیہ ٔ خداوندی ہے۔ اس وسیع و عریض کائنات میں  تمام مظاہر فطرت کے  عمیق مشاہدے  سے  یہ امر منکشف ہوتا ہے  کہ جس طرح فطرت ہر لمحہ لالے  کی حنا بندی میں  مصروف عمل ہے  اسی طرح خواتین بھی اپنی تسبیح ِ روز و شب کا دانہ دانہ شمار کرتے  وقت بے  لوث محبت کو شعار بناتی ہیں۔ خواتین نے  تخلیق ادب کے  ساتھ جو بے  تکلفی برتی ہے  اس کی بدولت ادب میں  زندگی کی حیات آفریں  اقدار کو نمو ملی ہے۔ موضوعات، مواد، اسلوب، لہجہ اور پیرایہ ٔ اظہار کی ندرت اور انفرادیت نے  ابلاغ کو یقینی بنا نے  میں  کوئی کسر اٹھا نہیں  رکھی۔ تانیثیت کا اس امر پر اصرار رہا ہے  کہ جذبات، احساسات اور خیالات کا اظہار اس خلوص اور دردمندی سے  کیا جائے  کہ ان کے  دل پر گزرنے  والی ہر بات بر محل، فی الفوراور بلا واسطہ انداز میں  پیش کر دی جائے۔ اس نوعیت کی لفظی مرقع نگاری کے  نمونے  سامنے  آتے  ہیں  کہ قاری چشم تصورسے  تمام حالات کا مشاہدہ کر لیتا ہے۔ تیسری دنیا کے  پس ماندہ، غریب اور وسائل سے  محروم ممالک جہاں  بد قسمتی سے  اب بھی جہالت اور توہم پرستینے  پنجے  گاڑ رکھے  ہیں ، وہاں  نہ صرف خواتین بل کہ پوری انسانیت پر عرصہ ٔحیات تنگ کر دیا جاتا ہے۔ راجہ اندر قماش کے  مسخرے  خواتین کے  در پئے  آزار رہتے  ہیں۔ ان ہراساں  شب و روز میں  بھی خواتین نے  اگرحوصلے  اور اُمید کی شمع فروزاں  رکھی ہے  تو یہ بڑے  دل گردے  کی بات ہے۔ خواتین نے  ادب، فنون لطیفہ اور زندگی کے  تمام شعبوں  میں  مردوں  کی ہاں  میں  ہاں  ملانے  اور ان کی کورانہ تقلید کی مہلک روش کو اپنانے  کے  بجائے  اپنے  لیے  جو طرز فغاں  ایجاد کی بالآخر وہی ان کی طرز ادا ٹھہری۔ جولیا کرسٹیوا ( Julia Kristeva)نے  اس کے  بارے  میں  لکھا ہے  :

“Truly feminist innovation in all fields requires an understanding of the relation between maternity and feminine creation”(4)

 فہمیدہ ریاض نے  مردوں  کی بالادستی اور غلبے  کے  ماحول میں  بھی حریت فکر کی شمع فروزاں  رکھی ااور جبر کا ہر انداز مسترد کرتے  ہوئے  آزادیٔ اظہار کو اپنا نصب العین ٹھہرایا۔ان کی ذہانت، نفاست، شائستگی، بے  لوث محبت اور نرم و گداز لہجہ ان کے  اسلوب کا امتیازی وصف قرار دیا جا سکتا ہے۔ انھیں  اپنے  آنسو ہنسی کے  خوش رنگ دامنوں  میں  چھپانے  کا قرینہ آتا تھا۔ ان کی سدا بہا رشگفتگی کا راز اس تلخ حقیقت میں  پوشیدہ ہے  کہ معاشرتی زندگی کو ہجوم یاس کی مسموم فضا سے  نجات دلائی جائے  اور ہر طرف خوشیوں  کی فراوانی ہو۔ یہ کہنا بے  جا نہ ہو گا کہ فہمیدہ ریاض کی تخلیقی تحریروں  میں  پائی جانے  والی زیرِ لب مسکراہٹ ان کے  ضبط کے  آنسووئں  کی ایک صورت ہے  ان کا زندگی کے  تضادات اور بے  اعتدالیوں  پر ہنسنا اس مقصد کی خاطر ہے  کہ کہیں  عام لوگ حالات سے  دل برداشتہ ہو کر تیر ستم سہتے  سہتے  رونے  نہ لگ جائیں۔ تانیثیت کے  حوالے  سے  فہمیدہ ریاض نے  خواتین کے  مزاج، مستحکم شخصیت اور قدرتی حسن و خوبی کی لفظی مرقع نگاری پر توجہ دی۔قدر تِ کاملہ نے  فہمیدہ ریاض کو جن اوصافِ حمیدہ، حسن و خوبی اور دل کشی سے  نوازا ہے  اس کا بر ملا اظہار ان کی تحریروں  میں  نمایاں  ہے۔ ان کی تحریریں  ایسی دل کش ہیں  کی ان کی اثر آفرینی کا کرشمہ دامن دل کھینچتا ہے۔ جمالیاتی احساس اور نزاکت بیان کے  ساتھ جذبوں  کی تمازت، خلوص کی شدت،  بے  لوث محبت، پیمان وفا کی حقیقت اور اصلیت اور لہجے  کی ندرت سے  یہ صاف معلوم ہوتا ہے  کہ ان کی تخلیقات کے  سوتے  حسن فطرت سے  پھوٹتے  ہیں۔ فہمیدہ ریاض نے  ان موضوعا ت کو بھی اپنے  اسلوب میں  جگہ دی ہے  جو خواتین کی ذات سے  تعلق رکھتے  ہیں  اور عام خواتین ان پر کچھ نہیں  کہتیں۔  فہمیدہ ریاض کی طرح فرانس سے  تعلق رکھنے  والی شاعرہ، ڈرامہ نگار، تانیثیت کی علم بردار، فلسفی، ادبی نقاداور ممتاز ماہر ابلاغیات ہیلن سکسوس( Helen Cixous)نے  اس موضوع پر جرأت مندانہ موقف اپنانے  پر زور دیا ہے  اور خواتین کے  جسمانی حسن، جنس، جذبات اور احسات کے  اظہار کے  حوالے  سے  لکھا ہے :

“Write youself ,your body must be heard ” (5)

 تانیثیت کے  موضوع پر فہمیدہ ریاض کے  خیالات کو دنیا بھر میں  قدر کی نگاہ سے  دیکھا گیا۔  تانیثیت کی اس صد رنگی، ہمہ گیری، دل کشی اور موضوعاتی تنوع کے  متعلق ما رکسزم، پس نو آبادیاتی ادب، ادبی تنقید اور تانیثیت پر وقیع تحقیقی کام کرنے  والی کلکتہ یونی ورسٹی ( بھارت) اور امریکہ کی سال 1865میں  قائم ہونے  والی کارنل یونی ورسٹی(Cornell University) اور سال 1754میں  قائم ہونے  والی کو لمبیا یو نیورسٹی(Columbia University) امریکہ میں  تدریسی خدمات پر مامور رہنے  والی ادبی تھیورسٹ گائتری چکراورتی سپی واک ( Gyatri Chakaravorty Spivak ) نے  لکھا ہے  :

 Feminism lives in the master -text as well as in the pores.It is not determinant of the last instance.I think less

 easily of changing the world,than in the past.” (6)

 جبر کا ہر انداز مسترد کرتے  ہوئے  فہمیدہ ریاض نے  استبدادی طاقتوں  کے  بارے  میں  جو نظمیں  لکھیں  ان میں ’ خانہ تلاشی ‘، ’ ’ کوتوال بیٹھاہے  ‘،  کیا تم پور ا چاند نہ دیکھو گے  (طویل نظم) اور’ بعد میں  جو کچھ یاد رہا ‘ گہر ی معنویت کی حامل ہیں۔ اپنی شاعری میں  فہمیدہ ریاض نے  جو منفرد لہجہ اپنا یا ہے  اس کی باز گشت عالمی ادب میں  بھی سنائی دیتی ہے۔ اس کی نظمیں  ’ آج شب ‘،  ’ اب سو جاؤ ‘،  ’ گڑیا‘،  ’ اک عورت کی نرم ہستی‘، ’وہ ان زن ناپاک ہے  ‘،  ’مقابلہ حسن‘، ’ لاؤ ہاتھ اپنا ذرا‘،  ’چادر اور چاردیواری ‘،  ’ انقلابی عورت‘ اور ’گرہستن ‘ پڑھنے  کے  بعد یہ بات واضح ہوجاتی ہے  کہ خواتین کے  بارے  میں  یہ نظمیں  عام روش سے  ہٹ کر لکھی گئی ہیں۔ تانیثیت کے  موضوع پرفہمیدہ ریاض کی گل افشانیٔ گفتار قابل توجہ ہے  :

تصویر

مر ے  دِل کے  نہاں  خانے  میں  اِک تصویر ہے  میری

خدا جانے  اِسے  کس نے  بنایا،  کب بنایا تھا

یہ پو شید ہ ہے  میرے  دوستوں  اور مجھ سے  بھی

کبھی بُھولے  سے  لیکن میں  اِسے  گر دیکھ لیتی ہوں

اِسے  خود سے  مِلاؤں  تو مِرا دِل کانپ جاتاہے

ایوارڈ

 فہمیدہ ریاض کی سماجی، معاشرتی اور علمی و ادبی خدمات کے  اعتراف میں  انھیں  مندرجہ ذیل ایوارڈ ز سے  نوازا گیا:

 ۱۔ ہیومن رائٹس واچ کی طرف سے  مزاحمتی ادب کے  لیے  ہیمٹ ہل مین ایوارڈ ( 2017)

 Hemmet Hellman Award for Resistance Literature from Human Rights Watch

 ۲۔ المفتا ح ایوارڈ برائے  ادب، شاعری Al Muftah Award for Literature: Poetry ( 2005)

 ۳۔ شیخ ایاز ایوارڈ برائے  ادب، شاعری ( حکومت سندھ ) Sheikh Ayaz Award for Literature: Poetry

 ۴۔صدارتی تمغۂ حسن کارکردگی ( حکومت پاکستان) (2010)

 ۵۔ستارۂ امتیاز ( صدر پاکستان)، ( 23۔مارچ2010)

تخلیقی کام

 پتھر کی زبان، گوداری( ناول)، خطِ مرموز، کراچی ( ناول)،  زندہ بہار ( ناول)، کیا تم پورا چاند نہ دیکھو گے، گلابی کبوتر، دھوپ، بدن دریدہ، کھلے  دریچے  سے، حلقہ میری زنجیر کا، آدمی کی زندگی، ادھورا

 آدمی( جرمنی میں  پیدا ہونے  والے  امریکی مارکسی ماہر نفسیات ایرک فرام (Erich Fromm:1900-1980 )کے  تجزیاتی مطالعہ پر مبنی )، قافلے  پرندوں  کے، پاکستان، ادب اور معاشرہ، یہ خانۂ آب و گِل۔سب لعل و گہر ( کلیات فہمید ہ ریاض ) سال اشاعت 2011

 فہمیدہ ریاض نے  پاکستان کی علاقائی زبانوں  کے  ادب میں  گہری دلچسپی لی اور ان زبانوں  کے  ادب کا مطالعہ کیا۔ انھیں  اردو، انگریزی، سندھی اور فارسی زبان پر خلاقانہ دسترس حاصل تھی۔ خواتین کے  مسائل، انسانیت کا وقار اور سر بلندی، حق گوئی و بے  باکی،  جنگ و جدال کے  مسموم اثرات،  دشمنی اور عداوتوں  کے  تباہ کن اثرات،  تاریخ، سیاست اور لوک ادب فہمیدہ ریاض کے  پسندیدہ موضوعات تھے۔  ترجمہ نگاری میں  فہمیدہ ریاض کی خداد اد صلاحیتوں  کا ایک عالم معترف ہے۔ فہمیدہ ریاض نے  البانیہ سے  تعلق رکھنے  والے  ناول نگار، شاعر اور ڈرامہ نگار اسماعیل کدرے  (Ismail Kadare) کی تخلیقات کو اردو زبان کے  قالب میں  ڈھالا۔  اسماعیل کدرے  کا سال 1963میں  شائع ہونے  والا ناول ’’مرد ہ فوج کا سالا ر‘‘ ( The General of the Dead Army)فہمیدہ ریاض کو بہت پسند تھا۔اس ناول میں  اسماعیل کدرے  نے  البانیہ کے  اس سالا ر کی داستان بیان کی ہے  جس کی فوج نے  ہزیمت اور پس پائی کے  وقت دوسری عالمی جنگ میں  زبردست جانی نقصان اٹھایا۔اسماعیل کدرے  کا ایک اور معرکہ آرا ناول محصورین کا قلعہ ( The Castle or The Siege)جو سال 1970میں  منظر عام پر آیا اسے  اسماعیل کدرے  کے  جرأت مندانہ منفرد اسلوب کی پہچان سمجھا جاتاہے۔ اس کے  علاوہ اسماعیل کدرے  کا سا ل1977میں  شائع ہونے  والامقبول ناول ’’ عظیم سرما ‘‘ (The Great Winter) بھی فہمیدہ ریاض کی توجہ کا مرکز رہا۔  فارسی زبان کے  عالمی شہر ت کے  حامل ممتاز شاعر شاعرمولانا جلال الدین محمد رومی ( 1207-1273)کے  فارسی کلام کا اردو ترجمہ کرنے  کے  سلسلے  میں  فہمیدہ ریاض کو اوّلیت کا اعزاز حاصل ہے۔ سندھی زبان کے  شاعر شاہ عبداللطیف بھٹائی(1689-1752) اور شیخ ایاز (1923-1997) کی شاعری کا بھی فہمیدہ ریاض نے  اِس مہار ت سے  اردو ترجمہ کیا کہ دو تہذیبوں  میں  سنگم دیکھ کر قاری اش اش کر اُٹھتا ہے۔  ایرانی شاعرہ فروغ زاد فرخ (1934-1967)کی منتخب نظموں  کے  تراجم پر مشتمل کتاب’’ کُھلے  دریچے  سے  ‘‘فہمیدہ ریاض کی ترجمہ نگاری کی عمدہ مثال ہے۔

 فہمیدہ ریاض کو اس بات کا شدت سے  احسا س تھاکہ قحط الرجال کے  موجودہ دور میں  بے  کمال لوگوں  کی پانچوں  گھی میں  ہیں  اور اہلِ کمال کا کوئی پرسانِ حال نہیں۔ اس عہدِ نا پرساں  میں  وقت کے  اس سانحہ کو کس نام سے  تعبیر کیا جائے  کہ یہاں  جاہل اپنی جہالت کا انعام ہتھیانے  میں  کامیاب ہو جاتے  ہیں۔ جس معاشرے  میں  ساغر صدیقی، رام ریاض، اطہر ناسک، اسحاق ساقی، فضل بانو، خادم مگھیانوی اور امیر اختر بھٹی جیسے  تخلیق کار کسمپرسی کے  عالم میں  زینۂ ہستی سے  اتر جائیں، ا س معاشر ے  کی بے  حسی کے  بارے  میں  دو رائیں  نہیں  ہو سکتیں۔ جب کوئی معاشرہ کسی مصلحت کے  تحت شقاوت آمیز نا انصافیوں  پر چُپ سادھ لے ، مظلوم کی حمایت میں  تامل کرے  اور ظالم کے  ہاتھ مضبوط کرے  تو یہ بات اس معاشرے  کی بے  حسی کی علامت ہے۔ اس قسم کی اجتماعی بے  حسی کسی بھی قوم کی بقا کے  لیے  انتہائی بُرا شگون ہے۔

 ادب کے  بعض سنجیدہ قارئین کا خیال ہے  کہ فہمیدہ ریاض کے  اسلوب کی پزیرائی کرنے  میں  بالعموم تامل کا اظہار کیا جاتا رہا۔  شاید یہی وجہ ہے  کہ اپنے  شعری مجموعے  ’’ بدن دریدہ ‘‘ کے  آغاز میں  فہمیدہ ریاض نے  حالات کے  جبر کو محسوس کرتے  ہوئے  مرزا اسداﷲ خان غالب ؔ کا یہ شعر شامل کر کے  اپنے  جذبات کااظہار کر دیا ہے  :

 گلیوں  میں  میری نعش کو کھینچے  پھرو، کہ میں

 جا ں  دادۂ ہوائے  سرِ رہ گزار تھا

مآ خذ

 ۱۔ علامہ محمداقبال ڈاکٹر: ضرب کلیم،  کلید کلیات اقبال،  اردو،  مرتب احمد رضا،  2005،  صفحہ 106

  1. David Lodge: Modern Criticism and Theory, Pearsom Educatiom Singapore 2004, Page 308
  2. Terry Eagleton: Literary Theory , Minnesota, 1998, Page. 194 London
  3. Ross Murfin : The Bedford Glossary of Critical and literay terms Bedford books.Bostan, 1998, Page 123
  4. Ross Murfin : The Bedford Glossary of Critical and literay terms Bedford books.Bostan, 1998, Page 123
  5. David Lodge: Modern Criticism and Theory, Pearsom Educatiom Singapore 2004, Page 491
  6. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Ghulam Shabbir Rana

  Mustafa Abad

 Jhnag City

Leave a Reply

Be the First to Comment!

Notify of
avatar
wpDiscuz
Please wait...

Subscribe to our newsletter

Want to be notified when our article is published? Enter your email address and name below to be the first to know.