خلیل الرحمن اعظمی:جدید غزل کا پیش رو

  

            خلیل الرحمن اعظمی (۱۹۲۷ء ۔۱۹۷۸ئ)جدید غزل کے بنیاد گزاروں میں شمار کئے جاتے ہیں ۔انہوں نے جدید دور کے اضطراب کو اپنی غزلوں میں پیش کرکے شاعری میں داخلیت کے عناصر کو پھر سے اجاگر کیا۔خلیل الرحمن اعظمی کا شعری ذہن جس وقت نمو پذیر ہو رہا تھا وہ ترقی پسندی کا دور تھا ۔چنانچہ وہ بھی اس تحریک سے وابستہ ہو گئے ۔اس تحریک سے وابستگی کی خاص وجہ یہ تھی کہ اس کے ذریعے زندگی کی حقیقتوں کا انکشاف اور عظمت ِ انسانی اور اجتماعی آرزوئوں کو پورا کرنے کی کوشش کی جا رہی تھی ۔لیکن رفتہ رفتہ اس تحریک میں شدت پسندی اور جمود کے اثرات دکھائی دینے لگے ،خلیل الرحمن اعظمی کا متحرک ذہن اس کو قبول نہیں کر سکا اور انہوںنے ادب میں پیدا ہونے والے اس جمود کو توڑنے کی کوشش کی ۔اپنے مجموعۂ کلام ’’نیا عہد نامہ ‘‘کے دیباچہ میں انہوںنے جن خیالات کا اظہار کیا ہے ان سے پتہ چلتا ہے کہ انہوںنے ترقی پسند تحریک سے بیزار ہوکر جدیدیت کے دامن میں پناہ لینے کا مصم ارادہ کر لیا تھا۔لکھتے ہیں:۔

                  ’’میری افتاد طبع اس وقت تک کچھ ایسے سانچے میں ڈھل چکی تھی کہ میں زندگی اور ادب کے سلسلے میں

                  اس تصور سے مطابقت نہیں کر پا رہا تھا جس میں ضرورت سے زیادہ غلو ،یک سرے پن اور منجمد نقطۂ

                  خیال کی کارفرمائی تھی۔پرانی مذہبی ،اخلاقی اور تہذیبی قدروں سے میں نے اپنا ناطہ اسی لئے توڑا تھا

                  کہ میرے نزدیک ان میں ادعائیت اور انجماد پیدا ہو گیا تھا اور وہ زندگی کے نامیاتی اور حرکی تصور کا

                  ساتھ نہیں دے رہی تھیں۔ترقی پسندی میرے نزدیک زندگی کی انہی حرکی تقاضوں سے عہدہ بر آ ہونے

                  کانام تھا۔مگر میں آہستہ آہستہ یہ محسوس کر رہا تھا کہ ترقی پسندی کے دعویدار ترقی پسندی کا بھی جامد اور محدود

                  تصور رکھتے ہیں اور اس سلسلے میں جس شدت سے کام لے رہے ہیں وہ اسی نوعیت کی ہے جو واعظوں اور

                  محتسبوں کی خصوصیت ہوتی ہے اور جن سے بیزار ہو کر میں نے اس تحریک کے دامن میں پناہ لی تھی۔ ‘‘(۱)

اس طرح خلیل الرحمن اعظمی نے زماںو مکاںکی قید سے آزاد ہو کراپنے جذبات و خیالات پیش کئے۔خلیل الرحمن اعظمی کی غزل گوئی سے وابستگی کے پس ِپردہ وہ جذبہ کارفرما ہے جس نے بہت پہلے ان کی ذہنی تربیت کردی تھی۔چونکہ وہ ایک اچھے ناقد بھی تھے اور تنقید کے سلسلے میں انہوںنے کلاسیکی شعرا کا بغور مطالعہ کیا تھا۔یہی وجہ ہے کہ ان کی ابتدائی شاعری میں وہ سب کچھ موجود ہے جو روایتی اور کلاسیکی غزل کا خاصہ ہے۔لب و لہجہ میں سادگی،الفاظ میں رومانیت و جمالیات کا وفور ،محبوب کی جفائیں،نارسائی،وصل و فراق کے مزے اور تڑپ ، رقیبوں کی عداوت ،زمانے سے بے پروائی کا بیان ان کی غزلیات میں بخوبی دیکھے جا سکتے ہیں:

                               اک مری آنکھ ہی شبنم سے شرابور رہی

                               صبح کو ورنہ ہر اک پھول کا منہ سوکھا تھا

                               خوار ہوئے بدنام ہوئے ،بے حال ہوئے رنجور ہوئے

                               تجھ سے عشق جتا کر ہم  بھی  نگر  نگر  مشہور ہوئے

                               جینے کا کچھ مزا ہے ترے دم سے ورنہ ہم

                               گم  گشتگان ِ  غم  کدہ ٔ  روز گار  تھے

                               مری نظر میں وہی موہنی سی صورت ہے

                               یہ رات ہجر کی ہے پھر بھی خوبصورت ہے

                               وہی عارض،وہی کاکل ،وہی کافر ادا آنکھیں

                               مگر ہر  لمحہ  پھر بھی کچھ نئے جادو  نکلتے ہیں

                               میں ضبط ِ غم بھی سکھا دوں گا اس محبت کو

                               پھر ایک بار مجھے  آزما کے دیکھ تو لے

            خلیل الرحمن اعظمی کی شاعری کا موضوع حسن و عشق ہے لیکن ان کے یہاں عشقیہ جذبات و کیفیات نئے تلازمات کے ساتھ وارد ہوئے ہیں۔وہ روایتی عشقیہ داستان سے گریز تو نہیں کرتے لیکن حسن و عشق کے رشتے کو تخیل کی دنیا میں پیش کرنے کے بجائے اسے جیتا جاگتا روپ دینے کی کوشش کرتے ہیں۔ہجر کی بات ہو یا فراق کے لمحے وہ تڑپتے تو ضرور نظر آتے ہیں لیکن اسی تڑپ کے درد سے اپنے غموں کا مداوا کرتے ہیں اور آہستہ آہستہ جینے کی نئی راہ ڈھونڈ نکالتے ہیں:

                               اب ان بیتے دنوں کی سوچ کر کچھ ایسا لگتا ہے

                               کہ خود  اپنی محبت  جیسے اک جھوٹی کہانی ہے

                               کچھ نہیں میری زرد آنکھوں میں

                               ڈوبتے  دن  کی  روشنی  ہوگی

             خلیل الرحمن اعظمی کا پہلا شعری مجموعہ ’’کاغذی پیرہن‘‘۱۹۵۶ء میں منظر عام پر آیا۔اس مجموعہ میں اٹھائیس(۲۸) غزلیں شامل ہیں جن کو ’’بوئے آوارہ ‘‘کے عنوان سے درج کیا گیا ہے۔اس مجموعے سے جو تاثر ذہن میں آتا ہے وہ یہ کہ خلیل الرحمن اعظمی ترقی پسندانہ شدت پسندی سے غیر مطمئن ہیں۔وہ بھی اپنے دوسرے ہم عصروں کی طرح ترقی پسندی سے کٹ کر جدیدیت کی طرف رخ کرکے اپنے ذاتی اظہار کے لئے جدید اصول و نظریات کا سہارا لیتے نظر آ رہے ہیں۔ محمود ہاشمی اس سلسلے میں لکھتے ہیں :۔

                  ’’کاغذی پیرہن کی شاعری دراصل اس دور کی غماز ہے جب ترقی پسند تحریک سے ٹوٹ کر کچھ شعرا اپنی

                  انفرادی فکر اور اپنے احساسات کو اپنے اشعار میں بیان کرنا چاہتے تھے۔ ‘‘ (۲)

’’ کاغذی پیرہن‘‘ کے سنجیدہ مطالعے کے بعد جس چیز کا احساس پہلے ابھرتا ہے وہ یہ کہ شاعر نے اس مجموعہ میں ہجرت کے موضوع کو پیش کیا ہے ۔اس مجموعے کی غزلیات کا موضوع اور اس کے سبب پیدا ہونے والا کرب قاری کو اپنی جانب متوجہ کرتا ہے:

                               لٹ گیا گھر تو ہے اب صبح کہیں شام کہیں

                               دیکھیے اب ہمیں ملتا بھی ہے  آرام کہیں

                               یہ  درد ِغربت،  یہ  اشک ِپیہم ،  یہ  اجنبی شہر کی ہوائیں

                               مگر جو وہ میرا حال پوچھیں تو میرے پیاروں سے کچھ نہ کہنا

                               دشت ِ غربت سے چلی لے کے تو اے یاد ِ وطن

                               ہائے  وہ میرا اک  اجڑا  ہوا  گھر ہو کہ نہ  ہو

ان اشعار میں شاعر کے دل پر چھائی ہوئی غم والم کی اس فضا کو محسوس کیا جا سکتا ہے جو گھر اور وطن سے دور ہونے کے بعد پیدا ہوتی ہے ۔ان اشعار میں شاعر نے خوبصورت شعری پیکروں کے ذریعے ہجرت کے کرب کا اظہار کیا ہے جو موثر بھی ہے اور منفرد بھی۔ہجرت کے علاوہ ’کاغذی پیرہن ‘کی شاعری میں جابجا شاعر کی ذاتی زندگی کا عکس بھی جھلکتا ہے ۔خلیل الرحمن اعظمی نے ان غزلیات میں زندگی میں قدم قدم پر ہاتھ آنے والی مایوسی ،ناامیدی اور مصائب و مشکلات کا بھی ذکر کیا ہے:

                              شام ِفراق  صبحِ قیامت سے  مل گئی

                              اب غم کی سر زمیں پہ کوئی آسماں نہیں

                              دل کا چمن ہے مرجھا نہ جائے

                              یہ  آنسوئوں سے سینچا گیا ہے

                              میرے ساز ِ غم پہ چھیڑو نہ یہ نغمۂ بہاراں

                              مجھے  راس آگیاہے  لباس ِ سوگواراں

                               زہر پی کر بھی یہاں ملی کس کو غم سے نجات

                               ختم  ہوتا ہے  کہیں سلسلۂ رقص حیات

یہ اشعار شاعر کی زندگی کی ان پریشانیوں اور تکلیفوں کی داستان بیان کر رہے ہیں جن سے وہ تمام عمر دست و گریباں رہے۔ان اشعار میں استعمال ہونے والے مختلف الفاظ و تراکیب نے شاعر کی اضطرابی کیفیت ،اس کی تنہائی ،اداسی اور مایوسی کے احساس کو مزید بڑھا دیا ہے۔ خلیل الرحمن اعظمی کی غزلوں کی اس کیفیت کو اسلوب احمد انصاری نے یوں بیان کیا ہے:۔

                  ’’ان غزلوں میں جو رچا ہوا غم ہے ،گھائل زخموں کے جو نشتر ہیں،جو خلش اور کسک ہے،جو خود سپردگی اور

                  معصومیت ہے اور اس کے ساتھ ساتھ جو ضبط و توازن ہے وہ کامیاب حزنیہ شاعری کے ماتھے کا جھومر ہے۔

                  مجھے کچھ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اعظمی صاحب کی نظموں میں جو واردات تفصیل سے بیان کی گئی ہیں ان کی

                  روح ان غزلوں میں کھینچ آئی ہے اور اسی لئے ان میں رمزیت اور ایمائیت کے جو ہر چمک اٹھے ہیں۔‘‘  (۳)

اس مجموعے کی غزلوں میں غم ِ دوراں کے ساتھ ساتھ غم ِ جاناں کی جھلکیاں بھی دکھائی دیتی ہیں۔عشقیہ واردات پر مشتمل غزلوں کے اشعار سے اندازہ ہوتا ہے کہ یہ مضامین روایتی اور رسوماتی نہیں ہیں بلکہ یہ شاعر کے تجربات و مشاہدات پر مبنی ہیں:

                               جنوں میں یوں  تو کچھ  اپنی  خبر ملتی  نہیں ہم کو

                               اک ایسا نام ہے جس پر ابھی تک دل دھڑکتا ہے

                               اک تم کہ پاس رہ کے بھی کچھ  دور  دور تھے

                               اک میں کہ تم سے چھٹ کے بھی کچھ بدگماں نہیں

                               یہ  دنیا ہم  کو کیا دے گی  مگر تیری محبت میں

                               بہانے مل ہی جاتے ہیں ہمیں اک بار جبنے کے

                               نہ  اب  اور عشق ِ سادہ کو  اسیر ِ رنگ  و بو کر

                               ترے حسن کا قائل ہوں مرے دل کی گفتگو کر

خلیل الرحمن اعظمی کی زندگی جن صعوبتوں اور بے رحم حقیقتوں سے دوچار ہوئی اور جس طرح کے رسوم و عقائد اور تہذیبی روایت کا وہ شکار ہوئے ،ان تمام عوامل و عناصر کے گہرے نقوش ان کی شخصیت پر مرتب ہوئے۔یہی وجہ ہے کہ ان کی عشقیہ واردات پر بھی جدائی ،محرومی ، تشنگی ،سوز و غم اور حزن و ملال کی گھٹا چھائی ہوئی ہے۔

            غرض ’’کاغذی پیرہن‘‘کی غزلوں میں جذبہ و خیال کی رعنائی اور اسلوب کی رنگا رنگی کے ساتھ ساتھ بیان کی شگفتگی تو نظر آتی ہے البتہ شاعر کے نظریات میںکسی طرح کا تغیر رونما ہوتا نظر نہیں آتا۔یہاں حسن و عشق کے لطیف و نازک احساس میں بھی وہی محرومی اور اداسی کا رنگ دکھائی دیتا ہے جو ان کے ذاتی اورسوانحی تاثرات کو بیان کرنے والی غزلوں کا خاصا ہے۔ان غزلوں میں فکروشعور کی وسعتوں کے بجائے جذبے اور احساس کی شدت کا غلبہ ہے۔اس سب کے باوجود خلیل الرحمن اعظمی کی یہ ابتدائی غزلیں رمزیت اور ایمائیت اور اوزان و قوافی کے خوبصورت استعمال کے سبب اپنا ایک منفرد مقام رکھتی ہیں۔

            خلیل الرحمن اعظمی کے دوسرے شعری مجموعہ ’’نیا عہد نامہ ‘‘(۱۹۶۵ئ) میں سینتیس (۳۷)غزلیں شامل ہیں۔ان غزلوں کے مطالعے سے معلوم ہوتا ہے کہ یہاں بھی شاعر کسی نہ کسی صورت میں انہیں ذہنی کیفیات سے دو چار ہے جو ابتدائی مجموعہ کا حصہ تھیں۔ایک پر سکون و پر عافیت زندگی ہونے کے باوجود بھی شاعر خود کو پوری طرح مطمئن محسوس نہیں کر پا رہا ہے ۔اس کا ذہن اب بھی منتشر و مضمحل ہے۔ اس کے اوپر اب بھی وہی محرومی و نا رسائی اور افسردگی کا احساس طاری ہے۔شاعر کے اس ذہنی انتشار کو ان اشعار میں محسوس کیا جا سکتا ہے :

                               آ آ کے گزر جائے ہے ہر موجۂ پر خوں

                               ہے یاں وہی شوریدہ سری دیکھیے کیا ہو

                               جو مجھ سے بولتی تھیں وہ راتیں کہاں گئیں

                               جو  جاگتا تھا  سوز ِ دروں  کون لے گیا

                               کون سی منزل میں ہوں اب کچھ یاد آتا نہیں

                               اپنی  تنہائی سے اکثر  پوچھتا  ہوں اپنا نام

                               وہ تو نہیں یہ اس کا ہی ہم شکل ہے کوئی

                               اب اس کی چل کے اور کہیں جستجو کرو

                               تو بھی اب چھوڑ دے ساتھ اے غم دنیا میرا

                               میری  بستی میں  نہیں  کوئی  شناسا میرا

ان اشعار میں الم ناکی و محرومی اور کلفت و افسردگی کی کیفیت کو صاف محسوس کیا جاسکتا ہے ۔اگر چہ پہلے مجموعے میں بھی یہ ذہنی کرب اور مضمحل کیفیت موجود ہے مگر یہاں یہ کیفیت زیادہ احساسی ہے۔

            خلیل الرحمن اعظمی نے اس زمانے میں میر تقی میر کا باقاعدہ طور پر مطالعہ کیا اور میر کے حالات زندگی کو اپنی زندگی سے مشترک پایا،اس لئے انہوںنے میر کو اپنا غم گسار بنا لیا۔میر ؔ کی آواز کو اپنی آواز بنانے کے پس ِ پردہ جو عنصر تھا اس کا ذکر’’نیا عہد نامہ‘‘کے دیباچہ میں  کرتے ہوئے خلیل الرحمن اعظمی لکھتے ہیں:۔

                   ’’میر کی آواز کو اپنی آواز سمجھنا میرے لئے محض غزل گوئی یا شاعری کا راستہ نہیں تھا بلکہ یہ میری زندگی

                   کا مسئلہ تھا۔اس آواز کا سراغ مجھے نہ ملتا تو میری روح کا غم جو اندر سے مجھے کھائے جا رہا تھا ،نہ جانے

                   مجھے کن اندھیری وادیوں کی طرف لے جاتا۔‘‘(۴)

اگر یہ کہا جائے تو بے جا نہ ہوگا کہ خلیل الرحمن اعظمی نے میر کی از سر نو بازیافت کی ہے اور محاسن کلام میر کو انہوںنے عصری احساسات کے ساتھ اپنی غزلوں میں بیان کیا ہے ۔میر سے ان کی دلچسپی سستی شہرت اور نام و نمود کے لئے نہیں تھی بلکہ یہ ان کے یہاں فنی بصیرت اور شعری وجدان کی صورت میں وارد ہوئی اور انہوں نے دردو غم کے عنصر سے زندگی کی ایک نئی معنویت کو صوری انداز میں پیش کر کے اپنے ذہنی شعور کا ثبوت دیا۔اس سلسلے میں ممتاز حسین کا خیال ہے:۔

                 ’’انہوںنے میر کے سوز و گداز سے فیض حاصل کیا ہے اور اسے ایک جدید رجحان کی حیثیت سے قبول

                 کرنے کی کوشش کی ہے۔وہ جدید رجحان اپنے ماحول کے غم اپنی ذات میں سمونے کا ہے۔اس سے

                 کلام میں قنوطیت پیدا نہیں ہوتی بلکہ کلام میں تاثیر پیدا ہوتی ہے اور اپنا غم ایک یونیورسل جذبے کی صورت

                 اختیار کر لیتا ہے۔‘‘(۵)

 میر کے لہجے میں شعر کہنے کی کوشش درج ذیل اشعار میں دیکھی جاسکتی ہے :

                              تجھ کو ٹھوکر مار کر بیٹھے ہیں فرش ِ خاک پر

                              کر  غم ِ دنیا  ایسے سرکشوں کا  احترام

                              گھر سے نکل پڑے ہیں اب کس کی جستجو میں

                              پہنچانتے  نہیں  ہیں  ہم  آج  سے کسی کو

                              تجھ سے کم کم واقف تھے تو روز کا ملنا ہوتا تھا

                              تجھ کو جانا،تجھ کو چاہا،وقف ِ شب ِ دیجور ہوئے

نسیم شہنوی میر کی پیروی کے سلسلے میں لکھتے ہیں:۔

                   ’’خلیل الرحمن اعظمی نے میر کے کلام سے بہت زیادہ اثر قبول کیا ہے ۔اس وجہ سے ان کے یہاں بھی

                   جگہ جگہ غم ِزندگی اور محرومیت کا احساس دکھائی دیتا ہے لیکن انہوں نے میر کے کلام کا مطالعہ ایک نئے

                   انداز سے کیا ہے جس کی وجہ سے ان کے یہاں انسان دوستی اور فراخ دلی سے زندہ رہنے اور زندگی

                   سے نباہ کرنے کا ہنر دکھائی دیتا ہے ۔ان کے کلام کی یہی انفرادی خوبیاں ا ن کو اپنے ہم عصر شعرا سے

                   بالکل الگ کر دیتی ہیں لیکن میر کے قریب ہونے کے باوجود وہ اپنی الگ راہ بنانے میں کامیاب

                   ہوئے ہیں۔ ‘‘ (۶)

شمس الرحمن فاروقی نے اپنے مضمون’’ خلیل الرحمن اعظمی کی غزل‘‘میں ان کی غزلیہ شاعری کے حوالے سے چند ایسے نکات پیش کئے ہیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ اجتماعیت کے بجائے ذاتی اظہار کے لئے بھی خلیل الرحمن اعظمی کو میر کے سائے میں پناہ لینی پڑی۔کیونکہ خلیل الرحمن اعظمی مروجہ طرز ِ اظہار سے ہٹ کر اپنی شاعری میں ذاتی تجربات کو پیش کرنا چاہتے تھے جس کے لئے انہوںنے متقدمین شعرا کا عموما ً اور میر کا خصوصا ً مطالعہ کیا۔اس کے نتیجے میں انہوںنے میر کو سب سے مختلف پایا۔دوسری چیز یہ کہ ترقی پسندی کے اثر سے میر نے ہی خلیل الرحمن اعظمی کو نجات دلائی جس کو فاروقی صاحب نے یوں بیان کیا ہے:۔

                  ’’حقیقت یہ ہے کہ میرؔ نے خلیل کو ترقی پسندوں کے ہاتھوں سے خرید کر آزاد کر دیا اور پھر انہوں نے

                  اپنی شخصیت خود دریافت کرلی۔‘‘  (۷)

فاروقی صاحب کے بیان کے مطابق میر سے قربت اختیار کرنے کے باوجود خلیل الرحمن اعظمی نے فکر اور اسلوب کی سطح پر میر ؔ سے کوئی خاص یا براہ ِ راست اکتساب نہیں کیا۔انہوں نے اس بات کی بھی وضاحت کی کہ خلیل الرحمن اعظمی کو طرز ِ میر کا شاعر سمجھنا صرف ایک عصری رجحان تھا۔فاروقی صاحب لکھتے ہیں:۔

                  ’’حالانکہ حقیقت یہ ہے کہ ان کو طرز ِ میر ؔ کا شاعر کہنا ان کی انفرادیت کے ساتھ ناانصافی اور خود میرؔ کے

                  ساتھ ناانصافی ہے۔خلیل الرحمن اعظمی کی شاعری میں میرؔ کا حصہ ہے لیکن بہت چھوٹا سا،ان کی بہترین

                  غزلوں کو کسی دوسرے شاعر کے سیاق و سباق میں رکھ کر پڑھنا مناسب نہیں۔‘‘   (۸)

جو چیز خلیل الرحمن اعظمی کو میرؔ کے رنگ سے جدا کرتی ہے وہ ان کی آہستہ رو خودکلامی کا انداز ہے۔ان کے یہاں کسی طرح کا احتجاج ،تخاطبی انداز ،زوروشور یا جوش و خروش نہیں پایا جاتا:

                               سوئی ہے کلی دل کی اس کو بھی جگا جانا

                               اس راہ سے بھی ہوکر اے بادِ صبا جانا

                               جب موسم ِ گل آئے اے نکہت ِ آوارہ

                               آکر  درِ زنداں  کی  زنجیر  ہلا جانا

                               پھر ہاتھ چھڑاتی ہے مجھ سے میری تنہائی

                               پھر  دل کے  سنبھلنے کے  انداز بتا جانا

                               کس ناز سے پالا ہے ہم نے غم ِ ہجراں کو

                               اس  غم  کو  ذرا  آکر  سینے سے لگا جانا

ان اشعار میں مکالماتی رنگ،خودکلامی اور سرگوشی کا انداز خلیل الرحمن اعظمی کے داخلی احساسات کی پیش کش کا نتیجہ ہے۔کاغذی پیرہن سے نیا عہد نامہ تک کی غزل گوئی پر تبصرہ کرتے ہوئے شمیم حنفی لکھتے ہیں:۔

                  ’’اعظمی کے شعور نے کاغذی پیرہن سے نیا عہد نامہ تک کا جو ارتقائی سفر طے کیا ہے اس میں تقلید اور

                  استفادے کی منزل پر بھی انہیں بالعموم اپنے شاعرانہ کردار کے تحفظ کا پورا احساس رہا ہے ۔چنانچہ

                  شروع کی غزلوں میں جو گھلاوٹ ،لوچ،نرمی کی جو کیفیت اور دھیرے دھیرے سلگنے ،اپنی آرزوئوں کا

                  ماتم کرنے ،خوابوں کی لٹی ہوئی بزم کو دوبارہ آراستہ کرنے اور زمانے کے عذاب کو جھیلتے ہوئے ڈوب

                  ڈوب کر ابھرنے کا جو انداز ملتا ہے اور رفتہ رفتہ شعور ِ نفس کے محاسبے سے گزر کر تزکیے اور تہذیب کی جس

                  منزل تک پہنچتا ہے اس کا تجزیہ کیا جائے تو یہ حقیقت اپنے آپ کو اچھی طرح تسلیم کروالیتی ہے کہ روایت

                  اور ترقی پسند ی کی توسیع کے باوجود اعظمی کی غزلیہ شاعری اپنے راستے کی تلاش سے بے نیاز نہیں رہی۔

                  اس واقعے نے ان کی پیشانی پر انفرادیت کی جومہر ثبت کی ہے وہ بہت کم شاعروں کا مقدر ہوتی ہے۔ ‘‘   (۹)

             خلیل الرحمن اعظمی کا تیسرا اور آخری شعری مجموعہ ’’زندگی اے زندگی‘‘ان کی وفات کے بعد ۱۹۸۳ء میں شائع ہوا۔اس میں چالیس (۴۰)غزلیں شامل ہیں جن کے مطالعے سے اندازہ ہوتا ہے کہ شعری سفر کی اس منزل تک پہنچتے پہنچتے ان کا ذہنی اور فنی رویہ بڑی حد تک تبدیل ہو چکا تھا۔موضوع کے اعتبار سے اگر دیکھا جائے تو ان غزلوں میں وہی موضوعات نظر آتے ہیں جن کا تعلق شاعر کی ذاتی زندگی سے ہے ،البتہ ان کے اظہار کی نوعیت پہلے سے قدرے مختلف ہے۔ان غزلو ں میں شاعر نے اپنے تجربات و خیالات کو بیان کرنے میں بے جا رسمی یا پر شکوہ انداز اختیار کرنے کے بجائے نہایت بے باکانہ اور دو ٹوک انداز اپنایا ہے۔ان کے اسی انداز کے سبب ان غزلیات کا لہجہ شروع کی غزلوں کے مقابلے میں زیادہ موثر اور مختلف ہوگیا ہے۔سید وقار حسین اس بارے میں لکھتے ہیں:۔

                  ’’کاغذی پیرہن اور نیا عہد نامہ کے مقابلے میں اس مجموعے میں خلیل الرحمن اعظمی شعر گوئی کے اس درجۂ

                  کمال پر پہنچ گئے ہیں جہاں شعر گوئی کے لئے شعوری کاوشوں کی ضرورت بے معنی ہوجاتی ہے۔یعنی یہاں

                  ان کی شاعری آرائش ،سنسنی خیزی اور ہنگامی مسائل سے پاک و صاف سادگی اور پختہ کاری کی بہترین

                  مثالیں پیش کرتی ہے ۔کیونکہ اب ان کے نزدیک یہ بات ناپسند یدہ تھی کہ محض فنی شعبدہ بازی دکھا کر داد

                  وصول کی جائے۔ ‘‘  (۱۰)

 اس مجموعہ میں شامل غزلوں میں کہیں کہیں تلخ نوائی کا احساس بھی ہوتا ہے ۔اس کی وجہ یہ ہے کہ انہیں زندگی کے آخری دنوں میں بھی جبکہ وہ زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا تھے، کچھ ذاتی صعوبتوں سے گزرنا پڑا:

                              لوگ ہم جیسے تھے اور ہم سے خدا بن کے ملے

                              ہم  وہ  کافر ہیں کہ ہم سے کہیں سجدہ  نہ  ہوا

                              اس پر بھی دشمنوں کا کہیں سایہ پڑ گیا

                              غم سا پرانا دوست بھی آخر بچھڑ گیا

                              ہمیں تو راس نہ آئی کسی کی محفل بھی

                              کوئی  خدا کوئی  ہمسایۂ  خد ا  نکلا

                              یاں تو سب لوگ ہیں دستار ِ فضیلت باندھے

                              کوئی ہم سا جو ہو محفل میں  تو ہم بھی بیٹھیں

ان اشعار میںکہیں کہیں خودپسندی کا رنگ بھی نظر آتا ہے۔زندگی کے آخری ایام کی تلخ کامیوں کے سبب ان کے یہاں بے باکی اور بے نیازی کا جوانداز پیدا ہو ا ،اس نے ان کی شاعری میں ایک نیارنگ اختیار کیا جسے صوفیانہ و قلندرانہ لہجے سے بھی تعبیر کیا جا سکتا ہے۔زندگی کی بے ثباتی ، من و تو کا فرق جیسے موضوعات ان کے اس مزاج کے ترجمان ہیں:

                             ایک دو پل ہی رہے گا سب کے چہروں کا طلسم

                             کوئی ایسا  ہو کہ جس کو  دیر  تک دیکھا کریں

                             میں اور تو میں بھید  نہیں کچھ ،  واحد جمع  برابر ہیں سب

                             سارے دھارے اس سے پھوٹیں سب سے بڑا جو ہوتا ہے

                             تلاش اس کی تھی مقصود، دیروکعبہ کیا

                              ہمارا رخ تھا جدھر اس کا اک نشاں ہوا

غرض اس مجموعہ میں شامل غزلیات کا رنگ و آہنگ بھی حزنیہ ہے جس کی وجہ سے ان کی مکمل شاعر ی پر غم و الم اور افسردگی کی فضا چھائی ہوئی ہے۔ان غزلیات کے حوالے سے یہ بات صاف طور پر کہی جا سکتی ہے کہ خلیل الرحمن اعظمی ان شعرا میں سرفہرست ہیں جنہوںنے جدید شاعری اور خاص کر جدید غزل کے لئے راستے ہموار کئے۔احمد محفوظ اس بارے میں رقمطراز ہیں:۔

                  ’’انہوںنے ان راستوں کو تلاش کیا اور انہیں ہموار بنایا جن پر جدید غزل کا قافلہ نہ صرف گامزن ہوا

                  بلکہ اس نے ایسے نقش بھی چھوڑے جن پر چلتے ہوئے اردو غزل آج بھی نئی نئی منزلوں کا سراغ لگانے

                  میں سرگرم ہے۔‘‘  (۱۱)

            خلیل الرحمن اعظمی کی غزلوں کا مطالعہ اس بات کا پتہ دیتا ہے کہ وہ کلاسیکی شاعری کے حامی اور روایت کے پاسدار تھے۔ انہوںنے روایتی شاعری کی قابل ِ قدرروایتوں کواپنی کسوٹی پر پرکھ کر اپنی شخصیت کے داخلی تجربات سے ہم آہنگ کر کے اس میں نئی جان ڈالی اور نیا انداز بیان پیدا کرکے نئی صورتوں کو اجاگر کیا۔ابتدائی دور کی شاعری میں وہ حسن ِ تغزل اور جمالیاتی نقطۂ نگاہ کو اپنے اشعار میں برتتے ہوئے نظر آتے ہیں لیکن بعد میں وہ ایک ایسے پختہ فنکار کے روپ میں سامنے آتے ہیں جو اپنی ادبی قدروں سے نہ صرف آگاہ ہیں بلکہ ان پر دسترس بھی رکھتے ہیں ۔واردات ِ قلبی کا بیان ہو یا زندگی کی نفسیاتی کشمکش ،دونوں کے بیان میں توازن رکھتے ہوئے انہیں شعری قالب میں ڈھالنا خلیل الرحمن اعظمی کا شیوہ تھا:

                             جی چاہتا تو بیٹھتے یادوں کی چھائوں میں

                             ایسا  گھنا  درخت بھی  جڑ سے  اکھڑ گیا

                             جانے کیوں اک خیال سا آیا

                             میں نہ ہوں گا تو کیا کمی ہوگی

                             لائوں کہاں سے ڈھونڈ کے میں اپنا ہمنوا

                             خود اپنے ہر خیال سے ٹکرا چکا ہوں میں

                             ہم نہیں قائل کسی مجنوں کسی فرہاد سے

                             یہ  نماز ِ عشق ہے اس کا کوئی امام نہیں

                             ہزار طرح کی مے پی ہزار طرح کے زہر

                             نہ پیاس  ہی  بجھی  اپنی  نہ حوصلہ  نکلا

 یہ اشعار زندگی کے نشیب و فراز کا بہترین نمونہ ہیں۔ان میں عہد نو کی بکھری ہوئی زندگی کے مجروح اور منتشر نظام کی تصویر دکھائی دیتی ہے جو انسانی قدروں اور تہذیب کا مژدہ سناتی ہے۔

           خلیل الرحمن اعظمی کے یہاں ایک دردو کسک ،حسرت و یاس اور ناکامی و نامرادی کا جو شائبہ نظر آتا ہے وہ مستقل نہیں ہے بلکہ انہوںنے ان مصائب و آلام کے باوجود زندگی کے خار دار راستوں کو ہموار بنایا اور زندگی میں ناکامی کے ساتھ کامیابی کے زینے بھی طے کئے۔ان کا غم انہیں جینے کا حوصلہ دیتا ہے:

                              وہ فاقہ مست ہوں جس راہ سے گزرتا ہوں

                              سلام  کرتا  ہے  آشوب ِ  روز گار  مجھے

                              ہم بانسری پر موت کی گاتے رہے نغمہ تیرا

                              اے زندگی اے زندگی رتبہ رہے بالا تیرا

                              تری صدا کا ہے صدیوں سے انتظار مجھے

                              مرے  لہو  کے  سمندر  ذرا  پکار  مجھے

خلیل الرحمن اعظمی کی شاعری پر شمیم حنفی اپنی رائے دیتے ہوئے کہتے ہیں:۔

                   ’’خلیل الرحمن اعظمی کی شاعری ایک کلچر اور اس کی قدروں کے زوال کے بعد کسی نو زائیدہ تہذیبی قدر

                   کی ترجمانی یا اجڑے ہوئے کلچر کا نوحہ یا محرومی کے احساس کو زائل کرنے کے لئے کسی سیاسی اور تہذیبی

                   انقلاب کا نقیب بننے کے بجائے ایک بے کلچر معاشرے میں ایک فرد کی آواز بن گئی۔وہ بہت جلد میر

                   کے اثر سے آزاد ہو گئے کیونکہ میر ایک منتشر اور محصور تہذیب سے الگ ہو کر بھی شعری رویے اور انفرادی

                   تجربے کے اعتبار سے ایک منظم اور با معنی معاشرے کے فرد تھے جس کی ترتیب و تہذیب حالات کی

                   تلخیوں سے متاثر ہو کر بھی بعض اصولوں پر قائم تھی۔اس کے برعکس خلیل کی غزل گوئی جس مقام پر

                   ہندوستان کی نئی غزل کا حرف ِاولین بنتی ہے وہاں زندگی کے تمام اصول ،نظریے ،بیرونی رشتے اور

                   معتقدات ہمارے عہد کے تہذیبی افلاس اور پراگندگی کی زد میں آکر ساتھ چھوڑ دیتے ہیں ۔یہیں

                   سے ان کی شاعری میر کے طرز فکر اور ترقی پسند تحریک کے ادعائی زاویۂ نظر دونوںسے الگ ہو کر

                   ان کے باطن سے ایک براہ ِراست اور قائم بالذات رشتہ استوار کرتی ہے۔زندگی کی رفتار،اس کے

                   شور شرابے اور بے معنویت کے سیل کی زد میں فرد کی بے چارگی اور ذات کا تحفظ کے مسائل اس شکل

                   میں اس سے پہلے کبھی نہ ابھرے تھے۔ ‘‘

خلیل الرحمن اعظمی کی غزل گوئی کا جائزہ لینے کے بعد پتہ چلتا ہے کہ اگر چہ وہ جدید غزل کے روح ِ رواں بنے رہے لیکن انہوںنے روایت سے بھی اپنے رشتے کو ہمیشہ برقرار رکھا ۔ابتدا میںان کی غزل گوئی میں کلاسیکیت اور رومانیت رچی بسی ہوئی تھی لیکن بعد میں وہ روایتی شاعری سے آگے بڑھتے ہوئے جدیدیت کی راہ پر گامزن ہوئے اور جدید غزل کے سرمائے میں قابل ِ قدر اضافہ کیا۔ان کی شاعری اپنے ہم عصروں کی شاعری میں ایک نئی آوازتھی اور یہ آواز دور سے پہچانی جانے لگی۔ان کی غزلوں میں کہیں حسن کی افسردگی ہے ،کہیں عشق کی سرشاری ۔کہیں سکون و اضطراب کی کشمکش ہے ،کہیں خاموشی ۔کہیں ماضی اور کہیں نئی منزل کی طرف واضح اشارے ملتے ہیں:

                               تو بھی خوابوں میں ملا میں بھی دھندلکے میں تجھے

                               زندگی   دیکھ   کبھی   غو ر   سے   چہرا   میرا

                               ہمارے عہد سے منسوب کیوں ہوئے آخر

                               کچھ ایسے خواب کہ جن کا نہیں ہے کوئی بدن

                               پوچھتے کیا ہو ان آنکھوں کی اداسی کا سبب

                               خواب جو دیکھے وہ خوابوں کی حقیقت مانگے

                                       ٭٭٭٭٭

حواشی:

۱۔دیباچہ ’’نیا عہد نامہ‘‘از خلیل الرحمن اعظمی۔ص۱۶

۲۔پردۂ دل پر ابھی باقی ہے تو،از محمود ہاشمی،مشمولہ رسالہ ’’شاعر‘‘۱۹۸۰ء خلیل الرحمن اعظمی نمبر۔ص۱۹۴

۳۔اختتامیہ کاغذی پیرہن،اسلوب احمد انصاری

۴۔دیباچہ ’’نیا عہد نامہ‘‘از خلیل الرحمن اعظمی۔ص۱۵

۵۔کاغذی پیرہن ،از ممتاز حسین،مشمولہ رسالہ ’’شاعر‘‘۱۹۸۰ئ،خلیل الرحمن اعظمی نمبر۔ص۱۷۷

۶۔خلیل الرحمن اعظمی ،نیا عہد نامہ کے آئینے میں،از نسیم شہنوی،مشمولہ رسالہ ’’شاعر‘‘۱۹۸۰ئ،خلیل الرحمن اعظمی نمبر۔ص۱۲۲

۷۔خلیل الرحمن اعظمی کی غزل ،شمس الرحمن فاروقی ،مشمولہ ’انداز گفتگو کیا ہے‘ ۔ص۱۲۸

۸۔ایضاً۔۔۔ـص ۱۲۷۔۱۲۸

۹۔غزل کا نیا منظر نامہ،شمیم حنفی۔ص ۱۴۱

۱۰۔خلیل الرحمن اعظمی دور آخری کی شاعری،سید وقار حسین،مشمولہ رسالہ ’’جامعہ‘‘جنوری تا مارچ ۲۰۰۱ئ۔ص۱۵۱

۱۱۔خلیل الرحمن اعظمی کی غزل ،احمد محفوظ ،مشمولہ رسالہ ’’جامعہ‘‘ جنوری تا مارچ ۲۰۰۱ء ۔ص ۱۹۱۔۱۹۲

۱۲۔نئی غزل کی روایت،از شمیم حنفی،مشمولہ’’ غزل کا نیا منظرنامہ‘‘۔ص۲۳،۲۴

نوٹ:۔

تصدیق نامہ:یہ مضمون غیر مطبوعہ ہے۔یہ مضمون کسی اور رسالے یا جریدے کو ارسال نہیں کیا گیا ہے اور نہ ہی اس سے پہلے کسی اور رسالے میں یہ مضمون شائع ہوا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔

 Firdoos Ahmad Mir

Lecturer Urdu GDC Women Anantnag

R/O Mahind Srigufwara Bijbehara Anantnag 192401

Email:mirzadafirdousalam@gmail.com

Leave a Reply

Be the First to Comment!

Notify of
avatar
wpDiscuz
Please wait...

Subscribe to our newsletter

Want to be notified when our article is published? Enter your email address and name below to be the first to know.